Abd Add
 

معارف فیچر

۱۔ معارف فیچر ہر ماہ کی یکم اور سولہ تاریخوں کو شائع کیا جاتا ہے۔ اس میں دنیا بھر سے (ہمیں) دستیاب ایسی معلومات کا انتخاب پیش کیا جاتا ہے‘ جو اسلام سے دلچسپی اور ملت اسلامیہ کا درد رکھنے والوں کے غور و فکر کے لیے اہم یا مفید ہوسکتی ہیں۔

۲۔ پیش کیا جانے والا لوازمہ بالعموم بلاتبصرہ شائع کیا جاتا ہے۔ کسی مضمون‘ نقطہء نظر‘ خیال یا معلومات کے انتخاب کی وجہ اس سے ہمارا اتفاق نہیں‘ اس کی اہمیت ہوتی ہے۔ کسی مضمون یا معلومات کی مدلل تردید یا اس سے اختلاف پر مبنی لوازمہ کو بھی جگہ دی جاسکتی ہے۔

۳۔ فیچر کو بہتر بنانے کے لیے مفید معلومات کے حصول یا ان کے ذرائع تک رسائی میں آپ کی مدد کا خیرمقدم کیا جائے گا۔

۴۔ ہمارے فراہم کردہ لوازمے کے مزید‘ لیکن غیرتجارتی ابلاغ کی عام اجازت ہے۔

۵۔ معارف فیچر کی کوئی قیمت مقرر نہیں۔ تاہم عطیات کی ضرورت بھی رہتی ہے اور عطیات قبول بھی کیے جاتے ہیں۔

بھارت میں سرکاری اسکولوں کی حالتِ زار

November 1, 2018 // 0 Comments

کمرہ جماعت میں ۸۰ کے قریب بچے موجود تھے۔ انھوں نے ہم آواز ہو کر ہمیں انگریزی میں صبح بخیر کہا اور پھر اپنی توجہ دوبارہ اپنے ریاضی کے استاد کی طرف مرکوز کردی۔ نیلے اور سفید لباس میں یہ بچے ترتیب سے اپنی نشستوں پر بیٹھے ہوئے تھے۔ یہ بھارتی ریاست اتر پردیش کے ایک نجی اسکول ’’وائے ڈی وی پی انٹرکالج‘‘ کی نویں جماعت کا منظر تھا۔ اسکول کا احاطہ کھیتوں سے گھرا ہوا تھا۔ اس اسکول کی فیس ۱۷۰ سے ۲۵۰ بھارتی روپے ہے جو کہ کسانوں اور مزدوروں پر مشتمل مقامی آبادی کے لحاظ سے کچھ زیادہ ہے۔لیکن اس کے باوجود یہ اسکول بھرا ہوا ہے اور یہاں ۱۰۰۰ طالب علم موجود ہیں۔اسکول کے ۱۱ ؍اساتذہ کو ان کی عمراور تجربے [مزید پڑھیے]

1 2 3 4 5 169