Abd Add
 

رپورٹ

تحقیق کی ابتدا کیسے؟

April 1, 2007 // 0 Comments

گزشتہ دنوں اسلامک ریسرچ اکیڈمی، کراچی کے شعبہ تحقیق کے تحت تحقیق و تحریر میں دلچسپی رکھنے والے خواتین و حضرات کے لیے ایک کورس کا آغاز ہوا۔ کورس کے پہلے لیکچر کا موضوع ’’تحقیق کی ابتدا کیسے؟‘‘ تھا۔ جامعہ کراچی شعبہ ابلاغ عامہ کے استاد اور ممتاز محقق پروفیسر ڈاکٹر نثار احمد زبیری نے بتایا کہ اقتباسات کو جمع کرنے کا نام تحقیق نہیں ہے بلکہ سیاق و سباق کے ذریعے قارئین و سامعین کو نئی ’’آگاہی‘‘ فراہم کرنا جس سے ان کی ذہنی وسعت میں مزید فکری بلندی پیدا ہو (جو شعور کے سفرکی ابتدا کا موجب بنے) کانام تحقیق ہے اور مسلمان تحقیق کے میدان میں جب تک Social Sciences کے مضامین، موضوعات یا عنوانات کی جانب توجہ نہیں دیں گے اس [مزید پڑھیے]

پاکستان کی معیشت اور اس کا مستقبل

March 1, 2007 // 0 Comments

گزشتہ دنوں جامعہ کراچی کے شعبہ بین الاقوامی تعلقات کے تحت ایک سیمینار بعنوان پاکستان کی معیشت اور اس کا مستقبل کا انعقاد کی گیا۔ ممتاز ماہر معاشیات ڈاکٹر شاہد حسن صدیقی نے سیمینار سے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ۱۹۹۰ء کی دہائی کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ یہ دہائی پاکستان کے لیے کچھ نہیں لائی حالانکہ یہ بات درست نہیں کیونکہ ۹۰ء کی دہائی آج کے دور سے بہتر اور آج کی پالیسوں کے مقابلے میں ۹۹ء سے پہلے کی پالیسیاں بہتر تھیں۔ ڈاکٹر شاہد حسن صدیقی نے اعداد و شمار کی بنیاد پر کہا کہ اس بات کے قوی امکانات موجود ہیں کہ موجودہ معاشی پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان کی معیشت آئندہ آنے والے دور میں مزید [مزید پڑھیے]

فلسطینی اطلاعاتی مرکز کی رپورٹ

August 16, 2006 // 0 Comments

فلسطینی اطلاعاتی مرکز کی ایک تازہ رپورٹ کے مطابق ۲۸ ستمبر ۲۰۰۰ء سے شروع ہونے والے الاقصیٰ انتفاضہ میں ۳۰ جون ۲۰۰۶ء تک صہیونی افواج کے ہاتھوں ۴۴۶۴ فلسطینی شہید کیے جاچکے ہیں۔ اس مدت میں ۴۷۴۴۰ فلسطینی زخمی ہوئے ہیں جن میں وہ ۸۴۳۵ بھی شامل ہیں جو داخل اسپتال ہوئے بغیر زیر علاج رہے۔ شہداء میں ۸۲۶ لوگ ایسے تھے جن کی عمریں ۱۸ سال سے کم تھیں۔ اس دوران ۲۸۹ عورتیں شہید ہوئیں جبکہ ۳۶ میڈیکل اسٹاف‘۹ میڈیا ورکرز اور اسپورٹس سے تعلق رکھنے والے ۲۲۰ افراد شہید کیے گئے۔ رپورٹ کا کہنا ہے کہ اس وقت ۹۸۰۰ فلسطینی صہیونی حکومت کی قید میں ہیں جن میں ۵۴۳ لوگ ایسے ہیں جنہیں الاقصیٰ انتفاضہ سے پہلے گرفتار کیا گیا تھا ان قیدیوں [مزید پڑھیے]

مسئلہ کشمیر: نئے عالمی اور علاقائی تناظر میں

February 16, 2006 // 0 Comments

کشمیر ایک ایسا سُلگتا موضوع ہے جسے ماہرین دنیا کا سب سے الجھا ہوا مسئلہ قرار دیتے ہیں۔ اٹھاون سال سے برقرار رہنے والے اس مسئلہ نے نہ صرف بھارت اور بالخصوص پاکستان کے لوگوں پر گہرے ذہنی و نفسیاتی اثرات مرتب کیے بلکہ برصغیر کی معیشت کو بھی استحکام حاصل نہیں کرنے دیا ۔ حالیہ دنوں میں اس مسئلہ کے حل میں تیزی نظر آتی ہے۔ لیکن اس میں عالمی مفادات کا تحفظ بھی اہم صورت اختیار کرگیا ہے۔ اس صورتحال کے تناظر میں گزشتہ دنوں ’’اسلامک ریسرچ اکیڈمی‘‘کراچی کے لیکچر سیریز کے تحت ایک سیمینار ہوا۔ ’’مسئلہ کشمیر: نئے عالمی اور علاقائی تناظر میں‘‘ کے موضوع پر ہونے والے اس سیمینار میں ماہرین سیاست اور دانشوروں نے اپنے خیالات کا اظہار کیا۔سیمینار کی [مزید پڑھیے]

عالم عرب میں جمہوریت

February 1, 2006 // 0 Comments

امریکا نے 9/11 کے بعد سے اپنی باجگزار ریاستوں کو چمکارنے کی پالیسی تبدیل کرکے انہیں ڈرا دھمکا کر اپنی بات منوانے کا طریقہ اختیار کیا۔ امریکا نے افغانستان اور عراق کے بعد بعض عرب ملکوں اور دیگر ممالک کی جانب اپنی توجہ مرکوز کر رکھی ہے ان میں ایران‘ شام‘ مصر اور الجزائر وغیرہ شامل ہیں۔ عرب ملکوں سے امریکا کا یہ مطالبہ ہے کہ وہ اپنی ریاستوں میں بتدریج اور فوری اصلاحات کے ذریعے جمہوری نظام رائج کریں۔ اس صورتحال میں اسلامک ریسرچ اکیڈمی کراچی کے لیکچر سیریز کے تحت ایک سیمینار کا انعقاد کیا گیا۔ ’’عالمِ عرب میں جمہوریت: پس منظر‘ پیش منظر اور امکانات‘‘ کے موضوع پر ہونے والے اس سیمینار کی صدارت اکیڈمی کے سینئر وائس چیئرمین سینیٹر پروفیسر عبدالغور [مزید پڑھیے]

’’بائبل: ابتداء سے انتہا تک‘‘

January 16, 2006 // 0 Comments

مذاہب ہر دور اور ہر قوم کے لوگوں میں دلچسپی کا موضوع رہا ہے۔ تاہم آج جب تقابل ادیان کی ہر طرف بات کی جارہی تو اس کی اہمیت بہت بڑھ گئی ہے۔ مذہب سے آگاہی اور اس کے پس منظر و پیش منظر سے واقفیت حاصل کرنا تحریر و تحقیق سے دلچسپی رکھنے والے طالب علموں کے لیے اہمیت کا حامل رہاہے۔ کیونکہ دین نے جب بھی مذہب کی شکل اختیار کی تو انسان بنیاد سے ہٹ گیا اور اختلافات و تنازعات کو جنم دیا۔ ان ہی خیالات کے پیش نظر سہیل جمیل نے بائبل پر تحقیق کا آغاز کیا اور بالآخر اپنی کوششوں کے بعد اسے تکمیل تک پہنچایا۔ اپنی اس تحقیق کو انہوں نے ’’بائبل: ابتداء سے انتہا تک‘‘ کے نام سے [مزید پڑھیے]

پاکستان کے آبی وسائل اور بڑے ڈیمز کی تعمیر

January 16, 2006 // 0 Comments

پاکستان میں نئے آبی ذخائر کی تعمیر کا موضوع اس وقت ہر طبقۂ فکر میں زیرِ بحث ہے۔ ان مباحث میں ہمیں واضح طور پر دو گروپ نظر آتے ہیں۔ ایک وہ جو اسے ملکی بقا اور تعمیر و ترقی کے لیے ناگزیر قرار دیتا ہے جبکہ دوسرے گروپ کو اس پر کئی تحفظات ہیں‘ خاص کر سرحد اور سندھ نئے آبی ذخائر بالخصوص کالا باغ ڈیم پر اپنے خدشات کا اظہار کر چکے ہیں۔ وفاق کی جانب سے بعض یقین دہانیوں اور منصوبے میں ترامیم کے باعث سرحد نئے آبی ذخائر کی تعمیر پر راضی ہوگیا‘ تاہم سندھ اب بھی اپنے خدشات کا اظہار بدستور کر رہا ہے۔ اس صورتحال میں ’’اسلامک ریسرچ اکیڈمی‘ کراچی‘‘ نے ایک پریزنٹیشن کا اہتمام کیا‘ جس کا موضوع [مزید پڑھیے]

خیبر بینک کی اسلام کاری

June 1, 2005 // 0 Comments

مورخہ ۲۴ مئی ۲۰۰۵ء کو ’’اسلامک ریسرچ اکیڈمی، کراچی‘‘ کے زیر اہتمام بینک آف خیبر میں اسلام کاری کے عنوان پر اکیڈمی کے نوتعمیر شدہ لیکچر ہال میں ایک پریزینٹیشن کا انعقاد کیا گیا‘ جس کی صدارت سینیٹر پروفیسر عبدالغفور احمد نے کی۔ بینک آف خیبر میں اسلامی بینکنگ آپریشن کے ہیڈ اور بینک کے نائب صدر اسد علی اور بورڈ آف ڈائریکٹرز کے ممبر پروفیسر سید محمد عباس نے غیرسودی کارگزاریوں پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔ خیبر بینک کی شرعیہ سپروائزری کمیٹی کا تعارف کراتے ہوئے پروفیسر سید محمد عباس نے کہا کہ ممتاز ماہرِ معاشیات سینیٹر پروفیسر خورشید احمد اس کے چیئرمین ہیں جبکہ جسٹس (ر) مفتی تقی عثمانی‘ پروفیسر ڈاکٹر محمود احمد غازی‘ مفتی غلام الرحمن‘ ڈاکٹر شاہد حسن صدیقی اور ڈاکٹر [مزید پڑھیے]

کراچی: آلودگی‘ مہنگائی اور منشیات کی زد میں!

June 1, 2005 // 0 Comments

ماحولیات ماحولیاتی آلودگی ویسے تو اب ایک عالمگیر مسئلہ بن چکا ہے جس سے دنیا کے دیگر ملکوں کی طرح ہمارا ملک بھی متاثر ہو رہا ہے۔ ملک کا سب سے بڑا شہر اور صنعتی و تجارتی مرکز ہونے کے باعث کراچی کا ماحولیاتی آلودگی سے متاثر ہونا ایک یقینی امر ہے جس کا ایک بڑا سبب یہ ہے کہ اس شہر کو صحت و صفائی کا قابلِ اعتماد نظام اب تک میسر نہیں آسکا ہے۔ گاڑیوں کا دھواں‘ ٹریفک کا شور‘ نکاسیٔ آب کے نظام کی خرابی کے باعث اکثر علاقوں میں گٹروں کا آئے دن ابلنا اور گلیوں اور سڑکوں میں جمع شدہ پانی نہ صرف پورے پورے علاقوں کے ماحول کو تعفن زدہ بنائے رکھتا ہے بلکہ اس سے مکھیوں اور مچھروں [مزید پڑھیے]

تفہیمِ حدیث سرٹیفکیٹ کورس

May 16, 2005 // 0 Comments

اسلامک ریسرچ اکیڈمی‘ کراچی کے تحت ۲۵ فروری تا ۱۳ مئی ۲۰۰۵ء ہر جمعہ بعد نمازِ مغرب ’’تفہیمِ حدیث سرٹیفکیٹ کورس‘‘ کا اہتمام کیا گیا۔ کورس میں تقریباً ۷۰ خواتین و حضرات شریک رہے۔ حضرت مولانا فقیر حسین حجازی (شیخ الحدیث جامعہ حنیفیہ و ڈائریکٹر قرآن فائونڈیشن) نے علومِ حدیث کے مختلف پہلوئوں کا احاطہ کرتے ہوئے طلبہ کو اس کے مبادیات اور باریکیوں سے اچھی طرح روشناس کرایا۔ فاضل استاد نے اپنے لیکچرز میں تعارفِ حدیث‘ حجیتِ حدیث‘ علوم الحدیث‘ اصطلاحاتِ حدیث‘ کتابت و تدوینِ حدیث‘ فتنۂ وضع حدیث‘ فتنۂ انکارِ حدیث‘ مستشرقین اور حدیث‘ طبقات المحدثین اور کتبِ حدیث جیسے اہم موضوعات کا احاطہ کیا۔ دورانِ لیکچرز سامعین کی جانب سے اس موضوع سے متعلق کئی سوالات اٹھائے گئے‘ فاضل استاد نے تشفی [مزید پڑھیے]

پاکستانی نظامِ تعلیم پر ایک عالمی ادارے کا اظہارِ تشویش

December 1, 2004 // 0 Comments

انٹرنیشنل کرائس گروپ‘ برسلز کی اوائلِ اکتوبر میں جاری کردہ ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان کا نظامِ تعلیم مکمل تبدیلی کا متقاضی ہے جو کہ اس کے خیال میں معاشرے میں بنیاد پرستی اور انتہا پسندی کے رجحانات کے فروغ کا سبب ہے۔ مزید برآں سیاسی عزم و ارادہ جو کہ اصلاحات کو جاری رکھنے کے لیے ضروری ہے‘ کا شدید فقدان پایا جاتا ہے جس کی وجہ سے صورتحال مزید پیچیدہ ہو گئی ہے۔ حالانکہ اعلیٰ سرکاری افسران کی جانب سے اصلاحات کے حوالے سے نہ جانے کتنے اعلانات اور دعوے کیے گئے ہیں۔ Pakistan: “Reforming the Education Sector” کے زیرِ عنوان رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جہادی گروہوں کے طلبہ پر بڑھتے ہوئے اثرات کی ایک وجہ ’’ملک کا بگڑتا ہوا تعلیمی [مزید پڑھیے]

1 2 3