Abd Add
 

خالد مشعل کا دورۂ جنوبی افریقا

صہیونی ریاست چراغ پا!

Hamas political leader Khaled Mashaal speaks at a conference on Palestine in Cairo, April 4, 2013. Mashaal is visiting South Africa this week, a move that has upset Israel. Gianluigi Guercia/Getty Images

جنوبی افریقا کی جانب سے حماس کی اعلیٰ قیادت کو تاریخی استقبالیہ دیے جانے سے صہیونی ریاست چراغ پا ہوگئی ہے اور اس نے تل ابیب میں جنوبی افریقا کے سفیر کو طلب کرکے اس پر سخت ناراضی کا اظہار کیا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ خالد مشعل کی قیادت میں حماس کا ایک وفد ۱۸؍اکتوبر کو کیپ ٹائون پہنچا۔ اس وفد کا جنوبی افریقا میں شاندار استقبال کیا گیا جس سے صہیونی ریاست چراغ پا ہے۔ اس وفد نے اپنے دورے کے پہلے دن جنوبی افریقا کے صدر جیکب روما سے ملاقات کی۔ حماس کے وفد میں موسیٰ ابومرزوق اور محمد نزال بھی شامل تھے۔ اطلاع ہے کہ خالد مشعل کیپ ٹائون کے وسط میں ایک عوامی ریلی میں بھی شرکت کریں گے۔ علاوہ ازیں جنوبی افریقا کی پارلیمان سے ان کا خطاب بھی ہوگا۔ یاد رہے کہ جنوبی افریقا نسل پرستی کے خلاف جدوجہد میں پوری دنیا کے لیے قابل تقلید مثال رہا ہے، جہاں نیلسن منڈیلا نے نسل پرست حکومت میں تین دہائی تک جیل کے پیچھے زندگی گزاری۔ نسل پرست حکومت کے خاتمے کے بعد ملک کے اندر اولین منصفانہ اور جمہوری انتخابات میں منڈیلا کی افریقی نیشنل کانگریس اقتدار میں آئی۔ اس سے قبل اس جماعت کو مغربی ممالک دہشت گرد قرار دیتے تھے۔ خالد مشعل کو جنوبی افریقا میں ہاتھوں ہاتھ لیے جانے سے ناراض صہیونی حکومت نے تل ابیب میں موجود جنوبی افریقا کے سفیر کو طلب کرکے ناراضی کا اظہار کیا اور کہا کہ حماس کی قیادت کے دورے کا مقصد دہشت گردی کی اعانت کرنا ہے کیونکہ حماس کو اسرائیل اور اس کے اتحادیوں نے دہشت گرد قرار دے رکھا ہے۔ تاہم حماس کی قیادت کے دورۂ جنوبی افریقا کی حمایت کرنے والوں نے اسرائیل کو اس کی دہشت گردی کا آئینہ دکھاتے ہوئے جواب دیا ہے کہ نیلسن منڈیلا کی افریقی نیشنل کانگریس کو بھی جنوبی افریقا کی نسل پرست حکومت نے دہشت گرد قرار دے دیا تھا، لیکن تاریخ نے اس کو غلط ثابت کردیا۔

(بشکریہ: سہ روزہ ’’دعوت‘‘ دہلی۔ ۲۵؍اکتوبر ۲۰۱۵ء)

Leave a comment

Your email address will not be published.


*