Abd Add
 

شمارہ یکم، 16 فروری 2018

پندرہ روزہ معارف فیچر کراچی
جلد نمبر:11، شمارہ نمبر:4-3

کرد امریکا اتحاد ناقابل قبول ہے!

February 1, 2018 // 0 Comments

ترک وزیر خارجہ مولود چاووش اوغلو کا کہنا ہے کہ شمال مغربی شام میں کرد ملیشیا کی قیادت میں سرحدی محافظوں کی فورس قائم کرنے کا امریکی منصوبہ ترکی کے ساتھ اس کے تعلقات کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا سکتا ہے۔ یہ بات انھوں نے ۱۶ جنوری کو وینکوور میں اپنے امریکی ہم منصب ریکس ٹیلرسن سے ہونے والی ملاقات میں کہی۔ ترک وزیر خارجہ کا کہنا تھا امریکا کی طرف سے YPG کی امداد اور ترکی کی طرف سے امریکا میں موجود فتح اللہ گولن کی حوالگی کی درخواست جیسے معاملات دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو پہلے ہی نقصان پہنچا چکے ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھاکہ ’’میں نے دوٹوک الفاظ میں ٹیلرسن سے کہا کہ معاملہ (کرد سرحدی محافظ دستہ)بہت سنجیدہ ہے۔ [مزید پڑھیے]

پاک امریکا تعلقات۔۔۔ راستے پھر جدا!

February 1, 2018 // 0 Comments

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے۲۰۱۸ء کے اپنے پہلے ٹویٹ میں پوری شدت اور تیقن سے پاکستان کے متعلق اپنے عزائم کا اظہار کچھ اس طرح کیا کہ غیر ملکیوں نے امریکا کو محض اپنے مفادات اور تفریح طبع کے طور پر لے لیاہے۔ہم نے پاکستان کو گذشتہ ۱۵ سالوں میں ۳۳ بلین ڈالر سے زیادہ امداد فراہم کی، لیکن اس کا صلہ اس نے ہمیں جھوٹ اور بے وفائی کے سوا کچھ نہیں دیا۔ ہم جن دہشت گردوں کے خلاف افغانستان میں بر سرپیکار ہیں، پاکستان انہیں محفوظ پناہ گاہیں فراہم کر رہاہے۔ لیکن ایسا اب نہیں چلے گا۔ مورخہ ۴ جنوری کوامریکا نے اعلان کیا کہ اگرپاکستان نے طالبان اور افغانستان کے دیگر دہشت گردوں کو اپنی سرحدوں سے نکال باہر کرنے کی سنجیدہ [مزید پڑھیے]

دنیا کی ۸۲ فیصد دولت پر ایک فیصد لوگ قابض

February 1, 2018 // 0 Comments

سوئٹزرلینڈ کے شہر ڈیوس میں ہونے والے ورلڈ اکنامک فورم کے اجلاس کے موقع پر Oxfam نے اپنی رپوٹ پیش کی، جس کے تحت سال ۲۰۱۷ء میں دنیا میں پیدا ہونے والی کُل دولت کا ۸۲ فیصد دنیا کے ایک فیصد امیر ترین افراد کے ہاتھوں میں رہا۔ جبکہ ۷ء۳؍ارب غریب ترین لوگ جو کہ دنیا کی آبادی کا نصف ہیں اپنے مالی حالات میں کوئی بہتری نہیں دیکھ سکے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ کس طرح عالمی معیشت دولت مند اشرافیہ کو دولت کے خزانے جمع کرنے میں مدد کرتی ہے جبکہ کروڑوں افراد غربت اورمفلسی میں زندگی گزارنے پر مجبور ہیں۔ ۱۔ سال ۲۰۱۰ ء سے ارب پتی افراد کی دولت میں سالانہ ۱۳فیصد کی اوسط سے اضافہ ہو رہاہے۔یہ ایک عام [مزید پڑھیے]