معارف فیچر

۱۔ معارف فیچر ہر ماہ کی یکم اور سولہ تاریخوں کو شائع کیا جاتا ہے۔ اس میں دنیا بھر سے (ہمیں) دستیاب ایسی معلومات کا انتخاب پیش کیا جاتا ہے‘ جو اسلام سے دلچسپی اور ملت اسلامیہ کا درد رکھنے والوں کے غور و فکر کے لیے اہم یا مفید ہوسکتی ہیں۔

۲۔ پیش کیا جانے والا لوازمہ بالعموم بلاتبصرہ شائع کیا جاتا ہے۔ کسی مضمون‘ نقطہء نظر‘ خیال یا معلومات کے انتخاب کی وجہ اس سے ہمارا اتفاق نہیں‘ اس کی اہمیت ہوتی ہے۔ کسی مضمون یا معلومات کی مدلل تردید یا اس سے اختلاف پر مبنی لوازمہ کو بھی جگہ دی جاسکتی ہے۔

۳۔ فیچر کو بہتر بنانے کے لیے مفید معلومات کے حصول یا ان کے ذرائع تک رسائی میں آپ کی مدد کا خیرمقدم کیا جائے گا۔

۴۔ ہمارے فراہم کردہ لوازمے کے مزید‘ لیکن غیرتجارتی ابلاغ کی عام اجازت ہے۔

۵۔ معارف فیچر کی کوئی قیمت مقرر نہیں۔ تاہم عطیات کی ضرورت بھی رہتی ہے اور عطیات قبول بھی کیے جاتے ہیں۔

ظلمت سے نور کی جانب

January 16, 2006 // 0 Comments

جرمین لجوانے جیکسن (Jermaine Lajuane Jackson) گیارہ دسمبر ۱۹۵۴ء کو امریکا کی ریاست انڈیانا کے شہر گرے میں پیدا ہوئے۔ ان کا تعلق افریقی امریکی گھرانے سے ہے۔ ان کی ماں کا نام کیتھرائن جیکسن اور باپ کا نام جوزف تھا۔ جرمین جیکسن معروف پاپ سنگرز مائیکل جیکسن اور جینٹ جیکسن کے بھائی ہیں۔ موسیقی کی دنیا میں ان کا نام بھی اپنے بھائی اور بہن کی طرح عالم گیر شہرت رکھتا ہے۔ مائیکل جیکسن اور جینٹ جیکسن اب بھی ناچ گانے کے شیطانی دھندے سے وابستہ ہیں جبکہ جرمین جیکسن ‘ یوسف اسلام (کیٹ اسٹون) کی طرح اپنے عروج کے زمانے میں ہی پاپ کی دنیا چھوڑ چکے ہیں۔ جرمین جیکسن کا قبول اسلام ہادی عالم رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے اس [مزید پڑھیے]

پاکستان کے آبی وسائل اور بڑے ڈیمز کی تعمیر

January 16, 2006 // 0 Comments

پاکستان میں نئے آبی ذخائر کی تعمیر کا موضوع اس وقت ہر طبقۂ فکر میں زیرِ بحث ہے۔ ان مباحث میں ہمیں واضح طور پر دو گروپ نظر آتے ہیں۔ ایک وہ جو اسے ملکی بقا اور تعمیر و ترقی کے لیے ناگزیر قرار دیتا ہے جبکہ دوسرے گروپ کو اس پر کئی تحفظات ہیں‘ خاص کر سرحد اور سندھ نئے آبی ذخائر بالخصوص کالا باغ ڈیم پر اپنے خدشات کا اظہار کر چکے ہیں۔ وفاق کی جانب سے بعض یقین دہانیوں اور منصوبے میں ترامیم کے باعث سرحد نئے آبی ذخائر کی تعمیر پر راضی ہوگیا‘ تاہم سندھ اب بھی اپنے خدشات کا اظہار بدستور کر رہا ہے۔ اس صورتحال میں ’’اسلامک ریسرچ اکیڈمی‘ کراچی‘‘ نے ایک پریزنٹیشن کا اہتمام کیا‘ جس کا موضوع [مزید پڑھیے]

1 80 81 82