Abd Add
 

اسرائیلی بچوں پر جنسی تشدد

حالیہ رپورٹ کے مطابق اسرائیل میں کم سے کم ۴۲۱ بچوں کو جن کی عمر ۱۴ سال سے کم ہے، جنسی تشدد کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ اسرائیل کے فلاحی امور کے وزیر Yitzhak Herzog کا کہنا ہے کہ معاملے کو صیغۂ راز میں رکھنے کے حوالے سے عوام کے اندر بیداری پیدا کرنا ضروری ہے۔ Yitzhak کا مزید کہنا ہے کہ بیداری مسئلے کی شناخت کرنے اور مستقبل میں طویل المیعاد نفسیاتی اثرات کو روکنے کے لیے انتہائی ضروری ہے۔ انھوں نے عوام سے ہوشیار رہنے کی اپیل کی اور تاکید کی کہ حکام کو جنسی تشدد کے کسی بھی واقعے کی اطلاع فوراً دی جائے۔ Yitzhak نے سماجی کارکنوں سے بھی تاکید کی ہے کہ وہ مسئلے کی شناخت میں حکومت کی مدد کریں اور اس طرح کے خوفناک جنسی تشدد کے واقعات کی اطلاع کے لیے خفیہ کوڈ کا استعمال کریں۔ اسرائیلی وزارتِ فلاح و بہبود کے اعداد و شمار سے پتا چلتا ہے کہ زندگی میں کم از کم ایک بار ہر ۷ خواتین میں سے ایک خاتون اپنے کسی رکنِ خاندان یعنی اپنے محرم رشتہ دار کے ذریعے عصمت دری کا نشانہ بنتی ہے اور ہر گیارہ لڑکوں میں سے ایک لڑکا اپنے کسی رکنِ خاندان کے ذریعے جنسی تشدد کا نشانہ بنتا ہے۔ سرکاری اعداد و شمار ظاہر کرتے ہیں کہ ۲۴۰۰ اسرائیلی Teenagers ۲۰۰۷ء میں جنسی تشدد کا نشانہ بنے ہیں۔

(بحوالہ: ’’پریس ٹی وی‘‘ ایران۔ ۲۸ مارچ ۲۰۰۸ء)

Leave a comment

Your email address will not be published.


*


This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.