Abd Add
 

اسرائیل

بحیرہ قزوین (Caspian Sea) کی بیش بہا دولت کو اسرائیل تک پہنچانے کا منصوبہ

September 1, 2005 // 0 Comments

گزشتہ سے پیوستہ امریکا کے عراق سے متعلق رویے نے ثابت کر دیا ہے کہ وہ اپنی عالمی صیہونی استعماریت کو دنیا پر مسلط کرنے کے لیے کسی بھی کارروائی سے دریغ نہیں کر رہا۔ ذرائع کے مطابق وسطی ایشیا کے بعد عراق کے امریکی عسکری اڈے خاص اہمیت کے حامل ہیں۔ اس سلسلے میں شمالی عراق میں کرکوک کے مقام پر نیا فوجی اڈا قائم کیا گیا ہے‘ جس کا اول ہدف ایران ہو سکتا ہے۔ امریکی وزارتِ دفاع کے حوالے سے بعض ذرائع کا کہنا ہے کہ اس اڈے پر ایٹمی اور کیمیائی وار ہیڈ سے مسلح میزائل نصب کیے جارہے ہیں۔ یہ میزائل اس سے پہلے ترکی میں انجرلیک کے امریکی اڈے پر نصب ہیں‘ جبکہ امریکا پہلے شمالی عراق کے اہم [مزید پڑھیے]

بحیرہ قزوین (Caspian Sea) کی بیش بہا دولت کو اسرائیل تک پہنچانے کا منصوبہ

August 16, 2005 // 0 Comments

مشرقی ازبکستان میں اٹھنے والی عوامی انقلاب کی لہر کو طاقت کے ذریعے دبا کر کئی سو مسلمانوں کو موت کے گھاٹ اتار دیا گیا‘ جبکہ ہزاروں کی تعداد میں مسلمان زخمی کر دیے گئے۔ اس واقعے کا افسوس ناک پہلو یہ ہے کہ اسلامی اور عرب ممالک کے میڈیا نے اس انقلابی واقعے کی کوریج انتہائی محدود اور محتاط انداز میں کی ہے جبکہ اس سلسلے میں مسلم ممالک کے میڈیا میں زیادہ تر رپورٹیں مغربی میڈیا سے براہِ راست ترجمہ کر کے شائع کی گئیں۔ مسلم ممالک کے بعض صحافتی ذرائع ازبکستان میں ہونے والی انقلابی کاوشوں کو حکومتی اور اسلامی تحریکوں کے درمیان جاری طویل کشمکش کے تناظر میں دیکھ رہے ہیں جبکہ اسی دوران ازبکستان میں اسرائیلی سرمایہ کاری کے بڑھتے [مزید پڑھیے]

صرف اقدامات ہی موثر ہیں!

June 16, 2005 // 0 Comments

اسرائیلی وزیراعظم ایریل شیرون کی ٹائم کے یروشلم بیورو چیف Matt Rees اور ورلڈ ایڈیٹر Romesh Ratnesar سے ملاقات ہوئی۔ اسرائیلی پارلیمنٹ میں انخلاء کے منصوبے کی منظوری کے بعد شیرون کا کسی میگزین کے ساتھ پہلا انٹرویو ہے‘ جس کا اقتباس درج ذیل ہے: ٹائم: یہ بہت ہی خوبصورت گھر ہے۔ شیرون: میری رہائش کا یہاں پانچواں سال ہے۔ ٹائم: ابھی کتنے سال اور آپ یہاں رہیں گے؟ شیرون: مجھے جلدی نہیں ہے۔ میں اس جگہ کو چھوڑنے کا ارادہ نہیں کر رہا ہوں۔ ٹائم: اگر آپ ماضی کے اس مقام پر جا کر سوچیں جبکہ آپ ایک نوجوان فوجی افسر تھے تو ۲۰۰۵ء کا اسرائیل آپ کے خیال میں کس طرح کا ہونا چاہیے؟ شیرون: میں نے اس وقت یہی سوچا تھا کہ [مزید پڑھیے]

1 3 4 5 6