Abd Add
 

بیروت

اسلام اور جمہوریت

September 1, 2011 // 0 Comments

لبنان کے دارالحکومت بیروت میں ایک خاتون نے انگریزی، عربی اور فرانسیسی کے ملغوبے سے تیار کردہ زبان میں بتایا کہ آج کل یہ لوگ بہت اچھی باتیں کر رہے ہیں مگر ان کی باتوں پر بھروسہ نہیں کیا جاسکتا۔ مصر، تیونس، لیبیا، مراکش رام اللہ (غزہ) میں بیداری کی جو لہر اٹھی ہے اور جس طور آمروں کی حکومتیں ختم ہو رہی ہیں اس کے تناظر میں ان ممالک کے سیکولر اور لبرل حلقوں میں اسلامی تحاریک کے بارے میں طرح طرح کے انتباہی کلمات عوام کی زبان سے سننے کو ملتے ہیں۔ اسلامی تحاریک کے قائدین اور ترجمان اور مرکزی دھارے کی تنظیموں مثلاً اخوان المسلمون کی جانب سے یہ یقین دہانی کرائی جارہی ہے کہ اقتدار میں آکر وہ حقیقی امن کے [مزید پڑھیے]