چین

نریندر مودی اور زی جن پنگ کا دورۂ امریکا

November 1, 2015 // 0 Comments

بھارت کے وزیراعظم نریندر مودی خود کو یہ باور کراچکے ہیں کہ ’’جو کچھ زی جِن پِنگ کرسکتے ہیں، وہ سب مَیں اُن سے بہتر کر سکتا ہوں‘‘۔ اور اسی یقین کے زیرِ اثر وہ بھی چینی صدر کے پیچھے پیچھے رواں برس ستمبر میں امریکا جا پہنچے۔ دونوں رہنماؤں نے اپنے دورۂ امریکا کا آغاز مغربی ساحلی ریاستوں سے کیا، جہاں وہ صفِ اول کی امریکی ٹیکنالوجی کمپنیوں کی توجہ حاصل کرنے کی کوششوں میں مصروف رہے۔ دونوں رہنماؤں نے اقوام متحدہ کے مختلف اجلاسوں سے خطاب کیے اور امریکا کے صدر براک اوباما سے ملاقاتیں کی۔ لیکن دونوں رہنماؤں کے اس دورے کی خاص بات یہ تھی کہ دونوں نے اپنے ان دوروں کو اپنے اور امریکا، دونوں ملکوں کے عوام کے درمیان [مزید پڑھیے]

غیر سرکاری تنظیمیں: غیر مہذب معاشرہ

October 16, 2015 // 0 Comments

حال ہی میں اشتراکی جماعت تجاویز کا ایک پلندہ سامنے لائی ہے، جس کا مقصد اقتدار پر اپنی اجارہ داری کو درپیش چیلنجوں کی روک تھام کرنا ہے۔ یکم جولائی کو قومی سلامتی سے متعلق ایک قانون منظور ہوا، جس نے دشمن عناصر سے ملک کو بچانے کے لیے ’ہر ممکن اقدام‘ اٹھانے کی منظوری دی۔ اب غیر حکومتی تنظیموں (این جی اوز) کو قانون کے دائرے میں لانے کے لیے آئندہ چند ہفتوں میں چین میں اپنی نوعیت کے پہلے قانون کا مسودہ لایا جا رہا ہے۔ اس قانون کو غیر حکومتی تنظیموں کی طرف سے لاحق خطرات سے نمٹنے کے لیے ضروری خیال کیا جارہا ہے۔ مجوزہ قانون محدود پیش رفت اور ایک حساس مسئلے پر جماعت کی پالیسی میں تخفیف کو ظاہر [مزید پڑھیے]

چین اور مشرقِ وسطیٰ

July 16, 2015 // 0 Comments

سیکڑوں برسوں تک مسافر قاہرہ کے روایتی بازار خان الخلیلی کی چکر دار گلیوں میں قالینوں، زیورات، مسالوں اور تانبے کی بنی اشیاء پر بھاؤ تاؤ کرتے رہے۔ آج ان اشیاء کا دستکاری کے کسی مقامی کارخانے کی بہ نسبت چین کی کسی فیکٹری میں بڑے پیمانے پر تیار ہونے کا امکان زیادہ ہے۔ چین اور مشرقِ وسطیٰ کے بڑھتے تعلقات میں تجارت کو مرکزی اہمیت حاصل ہے۔ گزری دہائی میں اس میں ۶۰۰ فیصد سے زیادہ اضافہ ہوا ہے اور ۲۰۱۴ء میں یہ ۲۳۰؍ارب ڈالر تک پہنچ گئی ہے۔ بحرین، مصر، ایران اور سعودی عرب سب سے زیادہ چین سے مال درآمد کرتے ہیں۔ ایران، عمان اور سعودی عرب سمیت خطے کے کئی ممالک کی سب سے بڑی برآمدی منڈی بھی چین ہے۔ اپریل [مزید پڑھیے]

اقتصادی شعبے میں چین امریکا محاذ آرائی

May 16, 2015 // 0 Comments

ترقیاتی شعبے میں سرمایہ کاری سے چین کے دوستوں میں اضافہ اور امریکی اتحادیوں پر بیجنگ کا اثر و رسوخ بڑھنے لگا ہے۔ امریکا اور چین کے درمیان رقابت نے کئی صورتیں اختیار کی ہیں۔ کبھی کبھار ہی کسی کو واضح برتری حاصل ہوتی ہے۔ لیکن نئے ایشین انفرا اسٹرکچر انویسٹمنٹ (اے آئی آئی) بینک کے قیام کے لیے چین کی کوششوں سے ایک بار پھر تصادم کی فضا پیدا ہوئی ہے۔ چین ایشیا ہی نہیں، یورپ میں بھی امریکا کے اتحادیوں کی حمایت حاصل کرنے میں کامیاب رہا۔ ایسے میں امریکا کا رویہ نامناسب اور غیر متاثرکن رہا۔ برطانیہ اور پھر فرانس، جرمنی اور اٹلی نے گزشتہ ماہ اعلان کیا کہ وہ بانی شراکت دار کی حیثیت سے اس بینک کا حصہ بنیں گے۔ [مزید پڑھیے]

چین کی نیشنل پیپلز کانگریس ۔۲۰۱۵ء

April 1, 2015 // 0 Comments

چین میں بارہویں نیشنل پیپلز کانگریس کا تیسرا اجلاس پانچ مارچ ۲۰۱۵ء کو بیجنگ میں ہوا۔ حکومت کی سالانہ کارکردگی رپورٹ اس اجلاس میں پیش کی گئی۔ وزیراعظم لی کی چیانگ نے کانگریس سے خطاب میں کہا کہ چین نئے معیارات کے مطابق آگے بڑھے گا۔ جس کا مطلب ہے چین کی سست رفتار ترقی کو معمول پر لانا۔ چین کی حکومت کا منصوبہ یہ ہے کہ شرحِ نمو (جی ڈی پی) کو کم کر کے سات فی صد کی سطح پر لایا جائے۔ (دوہزار چودہ کے منصوبے میں جی ڈی پی سات اعشاریہ پانچ فی صد تھا)۔ اس کے ساتھ ساتھ حکومت ملک میں ماحولیاتی آلودگی جیسے بڑے مسائل سے نمٹنے پر توجہ دے رہی ہے۔ حکومت کی سالانہ رپورٹ میں لفظ بدعنوانی آٹھ [مزید پڑھیے]

کیا چین قدامت پسند ہو رہا ہے؟

March 1, 2015 // 0 Comments

چین نئے قمری سال کا جشن منا رہا ہے اور اس سال بھی عالمی معیشت پر اپنا اثر و رسوخ بڑھانے کی جانب اپنا سفر جاری رکھ سکتا ہے۔ لیکن ملک کی قیادت کے لیے ایک اہم بحث یہ ہے کہ دنیا چین کو کس قدر متاثر کر رہی ہے۔ ایسے اشاروں میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ چین مزید قدامت پرست ہو رہا ہے۔ ۲۰۱۲ء میں اقتدار سنبھالنے کے بعد سے صدر شی جن پنگ ملک کے انتظامات چلانے کے معاملے میں اختیارات اپنے ہاتھ میں قائم رکھنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ وہ اپنے ’چین کا خواب‘ کا تصور پیش کر چکے ہیں، انہوں نے کرپشن کے خلاف لگاتار مہم چلائی اور اس بات پر زور دیا [مزید پڑھیے]

1 2 3