مصر

عرب دنیا کے مَلِک اور مملوک ریاستیں

July 16, 2016 // 0 Comments

قاہرہ کے دفتر میں بیٹھ کر نیل کے نظاروں سے لطف لیتا تاجر اپنا موبائل فون شیشے کے جار میں رکھتا ہے جبکہ شہر کے دیگر حصوں میں ایک لکھاری اپنا فون فرج میں رکھتی ہے۔ اگر اسمارٹ فون کبھی ساری عرب دنیا میں انقلابیوں کا ہتھیار تھے تو اب یہ خفیہ اداروں کا آلۂ کار بن گئے ہیں تاکہ مخالفین کے فون ہیک کرکے انہیں جاسوسی کے آلات میں بدل دیا جائے۔ ان دنوں عرب دنیا میں کام کرنے والے صحافی کو ایسے اسمارٹ فون کی ضرورت ہے جو روابط کی انتہائی محفوظ ایپس سے مزین ہو۔ مصری اس ضمن میں ’’سگنل‘‘ کو پسند کرتے ہیں، سعودیوں کی ترجیح ’’ٹیلی گرام‘‘ ہے اور لبنانی ابھی تک ’’واٹس ایپ‘‘ پر بھروسا کیے ہوئے ہیں۔ ۲۰۱۱ء [مزید پڑھیے]

مصر افریقا میں پھر سرگرم!

April 1, 2015 // 0 Comments

مصر کے سابق کرشماتی صدر جمال عبدالناصر کا دعویٰ تھا کہ مصر کی تین خصوصیات اس کا تعارف ہیں۔ ان میں عرب اور مسلمان ہونا تو ثابت ہیں مگر بقول جمال عبدالناصر، تیسری خصوصیت ایسی ہے جس پر زیادہ توجہ نہیں دی جاتی۔ ان کا استفسار تھاـ کہ کیا ہم اس بات سے صَرفِ نظر کر سکتے ہیں کہ برِاعظم افریقا کا حصہ ہونا قدرت نے ہماری تقدیر میں لکھ دیا ہے؟‘‘ ناصر مصر کو افریقا کے قریب لے کر آئے اور انہوں نے ان راہ نمائوں کے ساتھ تعلقات پروان چڑھائے، جو اُن کے مصر میں لائے گئے انقلاب کی تقلید کرنا چاہتے تھے۔ مگر حالیہ برسوں میں مصر افریقا سے بہت دور جا چکا ہے۔ تعلق میں یہ تلخی اُس وقت آئی، جب [مزید پڑھیے]

1 2 3