Abd Add
 

بھارت

’’نریندر مودی پھر متحرک‘‘

July 16, 2016 // 0 Comments

نریندر مودی بہت جاندار اور باصلاحیت فروش کار (Salesman) ہیں۔ گزشتہ کئی بیرونی دوروں میں اس بات کا اندازہ انہوں نے نہ صرف اپنے الفاظ سے بلکہ اپنے انداز سے بھی کرایا ہے۔ اپنی راحت انگیز مسکراہٹ، روایتی لباس اور گرم جوشی سے معانقہ کرتے ہو ئے وہ ایک بڑے ملک کے عاجزانہ تاثر کو اجاگر کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ مگر اسی مہربان سے بھارت میں (جس کا تاثر مودی پیش کر رہے ہیں) ان کی راہنمائی میں بہت سی علاقائی طاقتیں جنم لے رہی ہیں۔ روایتی ہندوستانی سفارتکاری غیر اتحادی (یعنی کسی بھی اتحاد سے اجتناب) طرز کی ہے۔ عملی طور پر اس کا مطلب یہ لیا جاتا ہے کہ عالمی مسائل سے دور رہا جائے اور اپنی سرحدوں کے پاس کے [مزید پڑھیے]

نریندر مودی اور زی جن پنگ کا دورۂ امریکا

November 1, 2015 // 0 Comments

بھارت کے وزیراعظم نریندر مودی خود کو یہ باور کراچکے ہیں کہ ’’جو کچھ زی جِن پِنگ کرسکتے ہیں، وہ سب مَیں اُن سے بہتر کر سکتا ہوں‘‘۔ اور اسی یقین کے زیرِ اثر وہ بھی چینی صدر کے پیچھے پیچھے رواں برس ستمبر میں امریکا جا پہنچے۔ دونوں رہنماؤں نے اپنے دورۂ امریکا کا آغاز مغربی ساحلی ریاستوں سے کیا، جہاں وہ صفِ اول کی امریکی ٹیکنالوجی کمپنیوں کی توجہ حاصل کرنے کی کوششوں میں مصروف رہے۔ دونوں رہنماؤں نے اقوام متحدہ کے مختلف اجلاسوں سے خطاب کیے اور امریکا کے صدر براک اوباما سے ملاقاتیں کی۔ لیکن دونوں رہنماؤں کے اس دورے کی خاص بات یہ تھی کہ دونوں نے اپنے ان دوروں کو اپنے اور امریکا، دونوں ملکوں کے عوام کے درمیان [مزید پڑھیے]

بھارت میں شادی کے بدلتے تیور

November 1, 2015 // 1 Comment

وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ بھارت میں بہت کچھ تبدیل ہو رہا ہے۔ ایک طرف تو ٹیکنالوجی کے شعبے میں زیادہ سے زیادہ مہارت آتی جارہی ہے اور دوسری طرف مالی حیثیت بھی بہتر ہوتی جارہی ہے۔ ممبئی اور دوسرے بڑے شہروں میں اب معاملات یوں بدلے ہیں کہ ذات پات کا فرق بھی مٹتا جارہا ہے اور آپس میں شادیاں عام ہوچلی ہیں۔ حقیقت یہ ہے کہ معاملات ذات پات کا فرق مٹنے تک محدود نہیں رہے۔ اب مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والوں میں بھی شادی عام ہوتی جارہی ہے۔ فلموں اور ڈراموں میں جو کچھ دکھایا جاتا رہا ہے وہ اب کہیں کہیں دکھائی دیتا ہے یعنی یہ کہ ماں باپ نے شادی طے کردی یا ذات کے فرق پر ہنگامہ کھڑا [مزید پڑھیے]

1 2 3 4 6