Abd Add
 

ایران

ایران کے جنرل سلیمانی کا عروج وزوال

September 16, 2015 // 0 Comments

ایران کے سب سے نمایاں فوجی افسر میجر جنرل قاسم سلیمانی کو اندرون ملک ایک عرصے سے عزت و احترام حاصل ہے مگر وہ کبھی منظر عام پر نہیں آئے تھے، یہاں تک کہ عراق کے محاذوں پر لی گئی ان کی تصاویر سماجی میڈیا پر آئیں جن میں وہ داعش کے جہادیوں کو بغداد سے پرے دھکیلنے والوں کی قیادت کرتے دکھائی دیے۔ ایرانی پاسدارانِ انقلاب کے بیرونی دھڑے قدس فورس کے ۵۸ سالہ کمانڈر پھر اس تیزی سے مقبول ہوئے کہ سال کے بہترین آدمی کا اعزاز اپنے نام کرلیا۔ جنرل سلیمانی کی تصاویر کو شروع میں نظر انداز کیا گیا مگر چونکہ ایران مشرقِ وسطیٰ میں اپنی دھاک بٹھانا چاہتا تھا، لہٰذا بعد ازاں ان تصاویر کو ریاستی اخبارات میں خوب جگہ [مزید پڑھیے]

اوباما کا مسئلۂ ایران

March 1, 2014 // 0 Comments

اس وقت براک اوباما کا سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ امریکا میں رائے عامہ ایران کے حوالے سے تقسیم ہوچکی ہے۔ حکومتی اور پارلیمانی حلقوں میں ایران پر بحث شدت اختیار کرگئی ہے۔ کانگریس میں اس حوالے سے واضح طور پر دو کیمپ دکھائی دے رہے ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ امریکی صدر کو ایران کے معاملے میں کانگریس سے زیادہ مدد نہیں مل سکے گی

ترکی اور عرب دنیا

January 16, 2012 // 0 Comments

سعودی شہزادے عبدالعزیز بن طلال بن عبدالعزیز السعود نے سعودی عرب کے شراکت دار اور مشرق وسطیٰ کے استحکام میں اہم کردار ادا کرنے کے حوالے سے ترکی کو سراہاہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ کردار اگرچہ نیا ہے تاہم اس کی اہمیت سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔ شہزادہ عبدالعزیز بن طلال کہتے ہیں کہ ’’پانچ دس سال پہلے تک یہ معاملہ نہیں تھا۔ خطے کی سلامتی اور استحکام میں ترکی کا واضح کردار نہیں تھا اور ہر معاملے میں اس کی طرف دیکھنے کا رجحان بھی عام نہیں ہوا تھا‘‘۔ سعودی شہزادے نے ان خیالات کا اظہار انقرہ کے تھنک ٹینک سینٹر فار مڈل ایسٹرن اسٹریٹجک اسٹڈیز کی دعوت پر ترکی کے دورے کے دوران ٹوڈیز زمان سے ایک انٹرویو میں کیا۔ انہوں [مزید پڑھیے]

’’تہذیب اسلامی کے احیاء میں ایران کا کردار‘‘

June 16, 2008 // 0 Comments

معارف لیکچر سیریز کے تحت جمعرات، ۱۲جون ۲۰۰۸ء کو انقلابِ ایران کے ممتاز فلسفی مرتضیٰ مطہری شہید کے فرزند ڈاکٹر علی مطہری (پروفیسر شعبۂ فلسفہ، آیت اﷲ بہشتی یونیورسٹی، تہران) کو بطور مہمان اسلامک ریسرچ اکیڈمی کراچی میں مدعو کیا گیا۔ ڈاکٹر علی مطہری خود بھی ایک ممتاز فلسفی ہیں۔ موصوف پاکستان کے نجی دورے پر تشریف لائے تھے۔ ڈاکٹر علی مطہری نے ’’تہذیبِ اسلامی کے احیا میں انقلابِ ایران کا کردار‘‘ پر پُرمغز، معلومات افزا اور فکر انگیز گفتگو کی۔ ہم علامہ امین شہیدی (اسلام آباد) کے شکر گزار ہیں، جنہوں نے اکیڈمی میں مہمان کی آمد کو ممکن بنایا اور اِس نشست میں ہونے والی تمام گفتگوؤں کا ترجمہ فارسی سے اردو اور اردو سے فارسی میں بڑی خوبصورتی سے پیش کر کے [مزید پڑھیے]

1 2 3