Abd Add
 

کشمیر

ملکوں کے مابین معاہدانہ تعلقات اور عسکری اقدام

March 16, 2014 // 0 Comments

قیامِ پاکستان کے فوراً بعد جہادِ کشمیر کے حوالے سے ایک اہم سوال پیدا ہوا تھا۔ اس وقت ممتاز دینی اسکالر مولانا سید ابوالاعلیٰ مودودیؒ کا ایک خاص مؤقف تھا، جس پر بعض حلقوں نے خاصا شور مچایا۔ ان پر شدید تنقید کی گئی۔ مگر وہ اپنے علمی مؤقف پر اپنے دلائل کے ساتھ قائم رہے۔ اسی بحث کے تناظر میں ۱۷؍اگست ۱۹۴۸ء کو مولانا مودودی نے سہ روزہ ’’کوثر‘‘ کو ایک تفصیلی انٹرویو دیا، جس میں اس موقف کو پوری صراحت اور وضاحت سے بیان کیا۔ ہم اس تاریخی انٹرویو کو قارئین کے لیے دوبارہ پیش کر رہے ہیں۔ آج کل بھی ہمارے ہاں اِسی طرح کی بحث جاری ہے۔ اِن علمی نکات سے معاملے کی تفہیم میں مدد مل سکتی ہے۔

ــــہندوستانی مسلمانوں کی مظلومیت۔۔۔ بے سبب نہیں!

December 1, 2012 // 0 Comments

مسٹر این سی استھانا (NC Asthana) سینٹرل ریزرو پولیس فورس، کوبرا (ایک ایلیٹ کمانڈوفورس) کے انسپکٹر جنرل ہیں ۔ ان کی اہلیہ مسز انجلی نرمل پولیس انتظام کاری (Police Administration) میں پی -ایچ -ڈی ڈگری کی حامل ہیں ۔ مسٹر این سی استھانا ا ور مسز انجلی نرمل نے اگست ۲۰۱۲ء کے آخر میں شائع شدہ اپنی مشترکہ تصنیف “India’s Internal Security: The Actual Concerns” میں مختلف بھارتی پالیسیوں ،بشمول انٹیلی جنس ناکامی، دہشت گردانہ حملوں میں ذرائع ابلاغ کا کردار، داخلی سلامتی اور مسلمانوں پر ظلم و ستم اور انتقامی کارروائیوں کا محاکمہ و تجزیہ کیا ہے۔ کنل مجمدار نے مصنفین سے ان میں سے کچھ امور پر بات چیت کی، جو حسبِ ذیل ہے: o کیا ہندوستانی سلامتی ادارے حقیقی خطرات سے صرفِ [مزید پڑھیے]

ہمارا نظامِ حکومت سابقہ نظاموں سے مختلف ہوگا

September 16, 2004 // 0 Comments

وزیراعظم شوکت عزیز نے اپوزیشن پارٹیوں کو اپنی جانب سے امن کی پیشکش کرتے ہوئے قومی مسائل پر اتفاقِ رائے کے حصول کے لیے بہت ہی سنجیدہ کوشش کیے جانے کا وعدہ کیا ہے۔ واضح رہے کہ ملک کی اپوزیشن جماعتوں نے وزیراعظم کے لیے شوکت عزیز کے انتخاب کا بائیکاٹ کیا تھا۔ ۵ اگست کی شام روزنامہ ’’ڈان‘‘ کے ساتھ اپنے ایک پینل انٹرویو میں وزیراعظم نے اپنے اس عزم کا اظہار کیا کہ وہ اپنے حکومتی اہداف کے حصول میں بہت ہی سخت واقع ہوں گے۔ وہ اپنی کابینہ کے تشکیلِ نو کے ساتھ حکومتی پالیسیوں کو نتیجہ خیزی کے اعتبار سے بہتر بنائیں گے۔ لہٰذا وزارتِ عظمیٰ کا ان کا آئندہ ۳ سال سے زائد کا عرصہ طرزِ حکومت کے معاملے میں [مزید پڑھیے]

1 2