Abd Add
 

پاک بھارت کشیدگی

پاک بھارت رابطے۔۔۔ محتاط رہنے کی ضرورت ہے!

June 1, 2010 // 0 Comments

پاکستان اور بھارت ایک بار پھر تعلقات بہتر بنانے کی راہ پر گامزن ہیں۔ رابطوں کا آغاز ہو چکا ہے اور الزامات کے تبادلے کے ساتھ وفود کے تبادلے بھی ہو رہے ہیں۔ معاملات درست کرنے کے لیے دونوں ممالک نے پہلے بھی کئی بار مذاکرات کیے ہیں مگر بات بنی نہیں۔ کشمیر کا مسئلہ تو خیر حل ہو کر ہی نہیں دیا، اب دریائی پانی کی تقسیم کا معاملہ بھی اٹھ کھڑا ہوا ہے۔ دہشت گردی کے حوالے سے الزامات کی گرد بھی بیٹھنے کا نام نہیں لے رہی۔ مذاکرات کے لیے رابطوں کا آغاز خوش آئند ہے تاہم اس معاملے میں دونوں کو محتاط رہنا پڑے گا۔ ابھی سے بہت سی توقعات وابستہ کر لینا خطرناک ثابت ہو گا۔ ماضی میں توقعات کا [مزید پڑھیے]

رواداری اور تہذیب و شائستگی پر کسی کی اجارہ داری نہیں

July 16, 2004 // 0 Comments

بڑی طاقتوں اور بالخصوص دنیا کی واحد سپرطاقت امریکا اور اس کے تنہا قابلِ بھروسہ حلیف برطانیہ کا یہ خیال ہے کہ جوہری ٹیکنالوجی اور اسلحہ ان کے اور بحالتِ مجبوری ایٹمی کلب کے تسلیم شدہ ممبروں کے علاوہ کسی دوسرے ملک کے پاس نہیں ہونا چاہیے‘ ان کی دلیل یہ ہے کہ اگر یہ چیزیں دوسروں کے ہاتھ لگ گئیں تو امن عالم کے درہم برہم ہو جانے کا قوی اندیشہ ہے‘ وہ اس کی ایک وجہ یہ بھی بتاتے ہیں کہ دوسروں کے پاس اس ٹیکنالوجی اور اسلحہ کی حفاظت کا ٹھوس اور معقول انتظام نہیں ہے‘ اس کی دوسری وجہ ان کے نزدیک یہ ہے کہ ان کے اور بدرجۂ مجبوری ایٹمی کلب کے تسلیم شدہ ممبروں اور اسٹراٹیجی کے بطور ’مہذب [مزید پڑھیے]