روس

روس کا ’’بند کمرا‘‘ نظام

November 16, 2016 // 0 Comments

روس کے معروف ادیب دستووسکی نے اپنے معرکۃ الآرا ناول ’’دی برادرز کراموزوف‘‘ میں لکھا ہے کہ اسرار، معجزہ اور اختیار۔ یہ تینوں چیزیں انسان کا ضمیر زندہ رکھتی ہیں۔ ولادیمیر پوٹن نے ان تینوں خصوصیات کو اپنے وجود میں جمع کرلیا ہے۔ ویسے تو وہ تینوں ہی معاملات میں غیر معمولی مہارت رکھتے ہیں مگر معاملات کو پراسرار رکھنے میں انہیں کمال حاصل ہے۔ وہ ہر کام کی بات کو یوں صیغۂ راز میں رکھتے ہیں کہ دنیا دیکھتی اور سوچتی ہی رہ جاتی ہے۔ کسی کو یہ معلوم ہو پاتا ہے کہ کریملن کی دیواروں کے پیچھے کیا چل رہا ہے نہ یہ معلوم ہو پاتا ہے کہ پوٹن کے ذہن میں کیا چل رہا ہے۔ ایک بات البتہ واضح ہے کہ روس [مزید پڑھیے]

عالمی بساط پر روس کی چالیں

March 1, 2016 // 0 Comments

بطور وزیراعظم مئی ۲۰۱۲ء میں ولادی میر پیوٹن تیسری بار روس کے صدر بنے۔ اس کے بعد سے روس بین الاقوامی سطح پر زیادہ جارحانہ اور مقامی سطح پر زیادہ جابرانہ رویہ اپنائے ہوئے ہے۔ روس کریمیا پر حملہ کرکے اسے غیرقانونی طور پر اپنے ساتھ شامل کرچکا ہے۔ اس نے مشرقی یوکرین میں علیحدگی پسندوں کی حمایت، تربیت اور ہتھیار بندی کی ہے اور ہزاروں فوجیوں کو وہاں لڑنے بھیجا ہے۔ وہ اب تک جمہوریہ جارجیا کے ۲۰ فیصد حصے پر قابض ہے اور ۲۰۰۸ء کے چھ نکاتی امن معاہدے کی خلاف ورزی کا مرتکب ہو رہا ہے، جس کے بعد ۲۰۰۸ء کی جارجیا جنگ ختم ہوئی تھی۔ روسی لڑاکا طیارے جنگ میں الجھے شامی صدر بشار الاسد کی حمایت میں فضائی حملے کر [مزید پڑھیے]

1 2