مختصر لباس وسیع تباہی پھیلانے والا ہتھیار

عورتوں کا مختصر لباس وسیع تباہی
پھیلانے والا ہتھیار ہے، روسی ماہر

لوگوں میں امراض کی بڑی وجہ خواتین کا مختصر اور بھڑکیلا لباس ہے۔ یہی وجہ ہے کہ یورپی ممالک میں ۳۰ سال سے زائد عمر کے مردوں کی بڑی تعداد مثانے کے سرطان اور دیگر امراض میں مبتلا ہے جبکہ مشرقِ وسطیٰ کے مسلمان ممالک میں جہاں خواتین پورا اور ڈھیلا ڈھالا لباس پہنتی ہیں، یہ امراض نہ ہونے کے برابر ہیں۔ یہ بات روسی سائنسدان ڈاکٹر لیونڈ کیٹاف سمائک نے اپنی تحقیقی رپورٹ میں بتائی۔ ڈاکٹر لیونڈ کیٹاف نے خواتین میں مختصر لباس پہننے کے رجحان کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ خواتین کو یاد رکھنا چاہیے کہ اپنے طرزِ عمل سے وہ مردوں کے لیے قبریں کھود رہی ہیں۔ برہنہ ہو کر رقص کرنے والی خواتین ہی دراصل معاشرے میں وسیع تباہی پھیلانے والا ہتھیار ہیں۔ مسلم معاشروں میں خواتین پورا اور ڈھیلا ڈھالا لباس پہنتی ہیں اور انھیں اس لباس میں دیکھ کر مردوں میں عورتوں کے لیے احترام کا جذبہ پیدا ہوتا ہے۔ ڈاکٹر لیونڈ کیٹاف جو روس کی اکیڈمی آف سائنسز کے ریسرچ انسٹی ٹیوٹ آف کلچرولوجی میں پروفیسر ہیں، کا کہنا ہے کہ خواتین میں مختصر لباس پہننے کے رجحان کو ختم کرنا ایک طویل اور مشکل کام ہے۔

(روزنامہ ’’ایکسپریس‘‘ ۷ مئی ۲۰۰۸ء)

Leave a comment

Your email address will not be published.


*