صدر پرویز مشرف: آمروں کی فہرست میں پندرہواں نمبر

پیریڈ میگزین جو امریکا میں ہر ہفتے کے دن اخبارات کے ساتھ تقسیم کیا جاتا ہے، نے جب پرویز مشرف کو بدترین آمروں کو فہرست میں شامل کیا تو پرویز مشرف نے ایک بار پھر اپنے آپ کو ایک ناخوشگوار حلقۂ یاراں کے درمیان محسوس کیا۔ یہ فہرست ایسی رپورٹوں کے اجرا سے تیار کی گئی ہے جنہیں بین الاقوامی حقوقِ انسانی کی تنظیموں اور امریکی وزارتِ خارجہ نے ترتیب دیا ہے۔ مدیر کے اپنے تعصبات نے بھی یقینا اپنا کردار ادا کیا ہے۔ فہرست میں نام کی جگہ اور نمبر کا تعین آمریت کی تصور کردہ شدت و سختی کے مطابق ہے۔ گذشتہ سال پاکستانی رہنما ۱۷ویں نمبر پر تھے لیکن امسال ان کا تعین ۱۵ویں نمبر پر کیا گیا ہے۔ سوڈان کے عمر البشیر کا نام سرفہرست ہے، اس کے بعد جو نام بالترتیب آتے ہیں، وہ یہ ہیں: شمالی کوریا کے کیم جونگ دوم، ایران کے سید آیت اﷲ خامنہ ای، چین کے ہوجنتائو، سعودی عرب کے شاہ عبداﷲ، برما کے تھان شوے، ذمبابوے کے رابرٹ موگابے، ازبکستان کے اسلام کریمون، لیبیا کے معمر القذافی، شام کے نیشارالاسعد، ایکیوٹیرنل گپنی کے تھیوڈور اوبیانگ نگویما، سواذی لینڈ کے شاہ مسفاتی سوم، اریٹیریا کے ایساپاس، پاکستان کے پرویز مشرف، لائوس کے چمالے سیراسون، ایتھوپیا کے میلسس زیناوی، مصر کے حسنی مبارک، ہیمبرون کے پائول بیا، روس کے ولادمیر پیوٹن۔ ۲۰ حکمرانوں پر مشتمل اس فہرست میں سب سے طویل حکمرانی پر فائز حکمراں کرنل قذافی جو ۱۹۶۹ء سے برسرِاقتدار ہیں۔ اس میں سب سے زیادہ عمر دراز حکمراں شاہ عبداﷲ ہیں جن کی عمر ۸۳ سال ہے اور سب سے کم عمر حکمراں سواذی لینڈ کے شاہ مسواتی ہیں جن کی عمر ۳۸ سال ہے۔

(بحوالہ ڈیلی ’’ٹائمز‘‘ کراچی۔ شمارہ: ۱۱ فروری ۲۰۰۷ء)

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*