قطب شمالی انسانی تاریخ میں پہلی بار جزیرہ بن گیا

قطب شمالی کی برف معلوم انسانی تاریخ میں پہلی بار پگھل گئی ہے، جس سے قطب شمالی جزیرہ بن گیا ہے اور اب بحری جہاز قطبِ شمالی کا سفر کر سکتے ہیں۔ یہ تاریخی واقعہ گزشتہ دنوں مصنوعی سیارے سے لی جانے والی تصاویر سے ظاہر ہوا۔ ان تصاویر سے معلوم ہوا کہ قطبِ شمالی کے شمال مغربی اور شمال مشرقی سمندر میں واقع برف پگھلنے سے سمندری راستے کھل گئے ہیں۔ جہاز ران کمپنیاں سوا لاکھ برسوں میں پہلی بار کھلنے والے اس سمندری راستے سے فائدہ اٹھانے کا سوچ رہی ہیں۔ جرمنی کی بیلوگا کمپنی کا کہنا ہے کہ وہ اگلے برس جاپان کے لیے جہازوں کو اس شمالی مغربی راستے سے بھیجے گی جس سے اسے ساڑھے چھ ہزار کلومیٹر فاصلے کی بچت ہو گی۔ اسی دوران کینیڈا کے وزیراعظم اسٹیون ہارپر نے اعلان کیا ہے کہ اس گزرگاہ سے گزرنے والے جہاز پہلے کینیڈین حکومت کو اطلاع دیں۔ ناسا کے مطابق پچھلے سال آرکٹک کی برف کی سطح میں ریکارڈ کمی واقع ہوئی تھی۔ سائنس دانوں کو خدشہ ہے کہ اگلے چند ہفتوں میں یہ ریکارڈ بھی ٹوٹ جائے گا اور برف کی یہ تہہ مکمل طور پر ختم ہو سکتی ہے۔ اس واقعہ کا برفانی ریچھوں پر گہرا اثر پڑا ہے۔ الاسکا میں برفانی ریچھوں کو غائب ہوتی ہوئی برف کی تلاش میں سیکڑوں میل تیرتے ہوئے پایا گیا ہے۔ ماحولیات کے ماہرین کہتے ہیں کہ دنیا کی برف مکمل طور پر پگھلنے سے سمندروں کی سطح میں اضافہ ہو سکتا ہے جس سے دنیا بھر کے نشیبی علاقے زیر آب آ سکتے ہیں۔

(بحوالہ: سائنس اینڈ ٹیکنالوجی ڈاٹ کام)

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*